حکومت نے پرویز مشرف پرآئین شکنی کیس کا فیصلہ روکنے کی درخواست کردی



خصوصی عدالت کو پرویز مشرف کےخلاف آرٹیکل چھ کا فیصلہ سنانے سے روکا جائے۔ اسلام آباد ہائیکورٹ میں وزارت داخلہ اور مشرف کے وکیلوں نے درخواستیں جمع کرائیں۔ وزارت داخلہ کی جانب سے آئین شکنی کیس کا فیصلہ روکنے کی درخواست میں کہا گیا ہے کہ پرویز مشرف کو صفائی کا موقع ملنے اور نئی پراسکیوشن ٹیم تعینات کرنے تک خصوصی عدالت کو فیصلے سے روکاجائےفیصلہ محفوظ کرنے کا حکم نامہ بھی معطل کیا جائے۔

درخواستوں میں کارروائی کو آئین سے متصادم قرار دیا کہاگیاکہ مشرف کوانصاف کےبنیادی حقوق سے محروم رکھاگیا،شدیدعلالت کےباعث وہ پیش نہیں ہوسکے،درخواستوں میں مشرف کی واپسی کا ذکر یا کوئی تاریخ نہیں دی گئی ۔ اسلام آباد ہائی کورٹ نےحکومت کی درخواست پر سماعت کےلیے لارجر بنچ تشکیل دیدیا۔چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ جسٹس اطہرمن اللہ کی سربراہی میں تین رکنی بینچ درخواست پر منگل کو سماعت کرے گا،جسٹس عامرفاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی بینچ کا حصہ ہوں گے۔خصوصی عدالت نے کیس کا فیصلہ انیس نومبر کو محفوظ کیاجو اٹھائیس تاریخ کو سنایاجاناہے۔

کوئی تبصرے نہیں

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.