چین نے حق دوستی ادا کردیا، سیکیورٹی کونسل میں جانے کی حمایت کردی



مقبوضہ  کشمیر کے معاملے پر چین نے پاکستان کے موقف کی تائید کردی۔  وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے بیجنگ میں چینی ہم منصب اور دیگر حکام سے اہم ملاقاتیں کیں۔  ان ملاقاتوں میں مقبوضہ کشمیر کی تازہ ترین صورتحال اور کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کے بھارتی اقدام پر تبادلہ خیال کیا گیا۔  شاہ محمود قریشی اور چینی وزیر خارجہ وانگ ژی کے درمیان ڈھائی گھنٹے طویل ملاقات ہوئی۔

ملاقات کے بعد  میڈیا سے گفتگو میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بتایا کہ  چینی وزیر خارجہ نے بھارتی یک طرفہ اقدام کے خلاف  پاکستانی مؤقف کی تائید کی، چین نے آج  ایک پھر ثابت کیا کہ وہ پاکستان کابا اعتماد دوست ہے۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارتی اقدام سے مقبوضہ کشمیرکی حیثیت، جغرافیہ میں تبدیلی ہوئی، چین نے اتفاق کیا کہ بھارتی اقدامات سے خطےمیں امن کو خطرات لاحق ہیں، مقبوضہ کشمیر متنازع مسئلہ تھا اور ہے۔
چینی وزیرخارجہ نے کہا کہ مسئلہ کشمیرکا حل یواین قراردادوں پرہونا چاہیے، چین کی خواہش ہے مسئلے کو پر امن طریقے سے حل کیا جانا چاہیے، چین کو پاکستان کے خدشات سے آگاہ کیا ہے، ہمیں کرفیو اٹھنے کے بعد مزید خون خرابے کا اندیشہ ہے، ردعمل بھی آ سکتا ہے۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان کو خدشہ ہے کہ بھارت پلواما جیسی حرکت دوبارہ کرسکتا ہے، چین نے کہا کہ وہ پاکستان کی سیکیورٹی کونسل جانے کی حمایت اور مکمل تعاون کرے گا۔

پاکستانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ہماری وزارتیں اور مشنز آپس میں روابط جاری رکھیں گے، روابط سے مشترکہ حکمت عملی ہوگی اورہم یکسوئی سے آگے بڑھ سکیں گے۔

کوئی تبصرے نہیں

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.