کراچی میں ڈیڑھ سالہ بچہ پولیس اور ملزمان کی فائرنگ کی زد میں آکر جاں بحق

Small child killed in a crossfire between Police and suspects in Karachi

کراچی میں یونیورسٹی روڈ پر پولیس اور ملزمان کے درمیان فائرنگ کی زد میں ڈیڑھ سالہ بچہ آ کر جاں بحق ہوگیا۔

ڈیڑھ سالہ محمد احسن  کےجاں بحق ہونے سے والدین غم سے نڈھال ہوگئے۔انہوں نے الزام عائد کیا ہے کہ بچے کو پولیس کی گولیاں لگیں۔

مقتول کے والد کاشف کا کہنا ہے کہ  ہم رکشے میں جا رہے تھے کہ پولیس کی فائرنگ سے احسن کے سینے میں گولی لگی جسے فوری طور پر طبی امداد کیلئے ہسپتال پہنچایا گیا لیکن وہ جانبر نہ ہو سکا۔

دوسری جانب ڈی آئی جی شرقی کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ پولیس کی فائرنگ سے بچے کی ہلاکت کے واقعہ میں ملوث اہلکاروں کی شناخت کر لی گئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ دونوں اہلکاروں کا بیان قلمبند کیا جا رہا ہے تاکہ شواہد سامنے آئیں۔ موٹر سائیکل سوار اہلکار کسی کی نشاندہی پر مبینہ ڈاکوؤں کا پیچھا کر رہے تھے۔

پولیس کی فائرنگ سے شہری کی ہلاکت کا یہ پہلا واقعہ نہیں۔ اس سے پہلے امل اور دیگر افراد بھی غیر تربیت یافتہ پولیس اہلکاروں کی گولیوں کی بھینٹ چڑھ چکے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ٹریننگ سینٹرز  پر توجہ دینے کی ضرورت ہے کیونکہ یکے بعد دیگرے ایسے واقعات جن میں پولیس کی فائرنگ سے شہری جاں بحق ہورہے ہیں ان کے سدباب کے لیے تربیت کو مزید بہتر  اور موثر بنانا پڑے گا۔ 

1 تبصرہ:

  1. کراچی میں یونیورسٹی روڈ پر پولیس اور ملزمان کے درمیان فائرنگ کی زد میں ڈیڑھ سالہ بچہ آ کر جاں بحق ہوگیا۔
    karachi

    جواب دیںحذف کریں

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.